دفاع کےلئے اچھا خاصا پیسہ چاہیےاور100دنوں کے دعوے کرنے والوں نے ڈھائی سال باتوں میں گزاردیےمجھے تو ساری لیڈرشپ ہی فارغ ہوتی ہوئی دکھائی دےرہی ہےتحریک انصاف کے سب سے بڑے حمایتی نے بھی ہاتھ کھڑے کردیے

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سینئر ملکی صحافی اور تجزیہ کار ہارو ن رشید کہتے ہیں کہ ملکی دفاع کےلئے معیشت کا بہتر ہونا بہت ضروری ہے۔ نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے ہارون رشید کا کہنا تھا

کہ اگر معیشت ڈوبتی چلی گئی تو دفاع کیسے ہوگا۔ ڈھائی سال کوئی ہنی مون پیریڈ نہیں ہوتا ۔ان لوگوں نے تو کہا تھا کہ سو دنوں میں یہ ہوجائے گا وہ ہوجائے گا۔ٹیکس وصولیاں 36ارب ڈالر سے کم ہوکر 25ارب ڈالر پر آگئیں۔دفاع کےلئے پیسہ چاہیے جس کے لئے کم سے کم سات سے آٹھ فیصد گروتھ ریٹ چاہیے ۔اور مجھے تو نہیں لگتا کہ عمرا ن حکومت اسے دو فیصد بھی کر پائے گی۔مجھے موجودہ ساری لیڈرشپ انفرادی طور پر فارغ ہوتی نظرآرہی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں