بریکنگ نیوز: پاکستان کورونا وائرس کی ویکسین سے محروم رہ گیا ،یہ کئی ممالک کو مل جائے گی مگر پاکستان کو وقت پر نہیں ملے گی ، مگر کیوں ؟ رؤف کلاسرا نے پاکستانیوں کو پیشگی اطلاع دے دی

لاہور (ویب ڈیسک)جو لوگ ہمیں زیادہ سیانے لگتے ہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ انہیں لائف میں دوسروں سے بہتر مواقع ملے‘ چاہے وہ اچھے پڑھے لکھے اور مالدار والدین کی شکل میں ہی کیوں نہ ہوں جنہوں نے اپنے بچوں کو نہ صرف زندگی کی بہتر سہولتیں فراہم کیں‘ بلکہ اچھے سکولوں اور کالجوں میں

پڑھایا بھی جس سے زندگی کی دوڑ میں وہ دوسروں سے آگے نکل گئے۔نامور کالم نگار رؤف کلاسرا اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ عمران خان صاحب کو پتہ چلا کہ بلاول‘ مریم اور مولانا ان پر برتری لے گئے ہیں تو انہوں نے سوچا کس کی مجال جو وزیراعظم سے زیادہ ہجوم اکٹھا کرکے دکھائے۔ پھر ان عظیم سیاسی لیڈروں کے درمیان مقابلہ شروع ہوگیا کہ کورونا کے دنوں میں کون کتنے لوگ اکٹھے کر پاتا ہے اور کتنی محنت سے وائرس پھیلا سکتا ہے۔ یوں کراچی‘ گوجرانوالہ‘ حافظ آباد‘ کوئٹہ‘ سوات‘ کراچی اور گلگت بلتستان تک مقابلہ ہوا‘ اورکورونا گیا تیل لینے۔ جب پوری دنیا کورونا کی ویکسین بارے پریشان تھی‘ اپنے بجٹ سے اربوں ڈالرز نکال کر کمپنیوں کے پاس ایڈوانس بکنگ کرا رہی تھی‘ اس وقت ہم عوام کو اپنے اقتدار کی خاطر سڑکوں پر لا کر کورونا پھیلا رہے تھے۔اب اسد عمر صاحب کی سن لیں‘ جنہوں نے کابینہ کے دس نومبر کے اجلاس میں خوفناک صورتحال پیش کی کہ پاکستان میں پچھلے ایک ماہ سے کورونا تیزی سے پھیلا ہے۔ یہ وہی دن ہیں جب نواز شریف‘ عمران خان‘ بلاول بھٹو‘ مریم نواز اور مولانا فضل الرحمن میں کانٹے کا مقابلہ چل رہا تھا کہ کون زیادہ لوگ باہر نکال سکتا ہے۔ اب کورونا ملک بھر میں پھر پھیل چکا ہے اور ان شہروں میں وہ شہر بھی شامل ہیں جہاں یہ جلسے کئے گئے۔ ذرائع کے مطابق ایک وزیر نے کابینہ میں پوچھ لیا کہ سنا ہے دنیا میں ویکسین ایجاد ہوگئی ہے‘ ہم نے اس معاملے میں کچھ کیا ہے؟ کیا ہمارے ہاں بھی ویکسین بائیس کروڑ لوگوں کو میسر آئے گی؟ اب جواب سنیں جو کابینہ اجلاس میں دیا گیا۔ بتایا گیا کہ وہ ساری ویکسین دنیا کے مختلف ممالک پہلے ہی اپنے شہریوں کے لیے خرید چکے ہیں۔ سب آرڈرز بک ہوچکے ہیں۔ نہ ہم نے ان کمپنیوں سے رابطہ کیا نہ ہماری اوقات تھی۔ ویسے بھی وہ ویکسین مائنس اسّی درجہ حرارت پر

محفوظ رہ سکتی ہے اور ہمارے پاس اس کے انتظامات نہیں‘ لہٰذا ہمارے حساب سے ویکسین کا ایجاد ہونا نہ ہونا برابر ہے۔ اور پاکستانی عوام بھول جائیں کہ مستقبل قریب میں یہاں ویکسین آئے گی۔ اس پر تمام وزیروں نے سکھ کا سانس لیا اور آخر میں فیصلہ ہوا کہ بس احتیاطی تدابیر ہوسکتی ہیں۔ وہی احتیاطی تدابیرجو وزیراعظم خود جلسوں میں توڑ آئے تھے۔ دوسری طرف بھارت میں میڈیا کو بتایا گیا کہ ان کی حکومت اس کمپنی سے رابطے میں ہے جس نے ویکسین بنائی ہے۔ وہ درجہ حرارت کے انتظامات بھی کررہے ہیں‘ اگلے سال کے شروع میں ویکسین منگوا کر لگانا شروع کردیں گے۔ ویسے حکومت کے لیے عرض ہے کہ اب نئی ویکسین بھی ایجاد ہوچکی ہے جس کا رزلٹ 95 فیصد ہے اور وہ عام فریج کے درجہ حرارت میں محفوظ رہ سکتی ہے۔ اب دیکھتے ہیں کون سا تیر مارا جائے گا یا پھر انتظار کیا جائے گا کہ دنیا کے سب ممالک اپنے شہریوں کو ویکسین لگا لیں اور اگر بل گیٹس کو ہم پر ترس آگیا تو شاید کچھ ڈالرز ہمیں دے دے کہ ویکسین خرید لواور پھر جب بل گیٹس کی بھیجی گئی ویکسین ہمارے ہاں آئے گی تو ہم ان خواتین ورکرز پر پل پڑیں گے‘ جیسے پولیو ویکسین میں کیا۔جب تک دنیا میں سب لوگوں کو ویکسین نہیں لگ جاتی اس وقت تک میرا خیال ہے ہمارے لیڈروں کو جلسوں جلوسوں کی تعداد بڑھا دینی چاہیے۔ بھلا یہ بھی کوئی بات ہے کہ جب تک سب دنیا کو ویکسین نہیں لگ جاتی اور کوئی ترس کھا کر ہمیں مفت نہیں دے دیتا‘ ہم جلسے بھی نہ کریں۔ نہ ہم نے دنیا کے دیگر ملکوں کی طرح ویکسین کمپنیوں سے رابطہ کیا‘ نہ بکنگ‘ نہ لاجسٹک انتظامات‘ نہ ہم نے احتیاطی تدابیر کیں اور نہ لمبے عرصے تک ویکسین کے پاکستان آنے کے امکانات ہیں تو کیا اب لیڈر اقتدار کی دوڑ میں جلسے کرنا بھی چھوڑ دیں؟ ایک بندے نے نہ روزے رکھے‘ نہ تراویح پڑھیں‘ نہ عید کی نماز لیکن جونہی ماں نے سویاں بنائیں فوراً بولا: اماں عید دیاں سویاں تاں ڈے چا۔ ماں نے کہا :شرم کرو نہ روزہ‘ نہ نماز‘ نہ تراویح لیکن عیدکی سویاں۔ وہ بولا: تو اماں اب عید کی سویاں بھی نہ کھائوں‘ کافر ہو کر دنیا سے رخصت ہوں ؟

اپنا تبصرہ بھیجیں