بریکنگ نیوز:پول کُھل گیا۔!! اسرائیل نے نئے بننے والے امریکی صدر جوبائیڈن کو مبارکباد کیوں نہ دی؟ تہلکہ خیز وجہ سامنے آگئی

واشنگٹن (ویب ڈیسک) ذرائع کے مطابق اسرئیلی وزیر اعظم نے نئے امریکی صدر کو بھی تک مبارکباد کیوں نہ دی؟ وجہ سامنے آگئی۔ اسرائیلی ذرائع ابلاغ نے بتایا کہ اسرائیلی صدر نے بھی تک اس لیے نئےامریکی صدر کو مبارک باد نہیں دی کیونکہ ابھی تک آفیشل اور باقائدہ اعلان نہیں ‌ہوا ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاھو نے امریکی انتخابات پر خاموشی اختیار کرلی ہے اس طرح متعدد عالمی رہنماؤں نے اب بھی صدر منتخب ہونے والے جو بائیڈن کو مبارکباد نہیں دی۔نیتن یاھو کے معاونین کا کہنا ہے کہ وہ “سرکاری نتائج کا انتظار کر رہے ہیں۔ امریکی صدارتی الیکشن ڈیموکریٹک پارٹی کے جوبائیڈن نے جیت لیا۔ جبکہ کملا ہیرس امریکی نائب صدر منتخب ہو گئیں۔ امریکی نشریاتی اداروں سی این این، این بی سی نیوز اور سی بی ایس نیوز نے بھی اپنی رپورٹس میں کہا کہ فیصلہ کن ریاست پنسلوینیا میں کامیابی کے بعد جو بائیڈن انتخاب میں فاتح قرار پائے ہیں۔امریکی میڈیا کے مطابق 77 سالہ جوبائیڈن امریکی تاریخ کے معمر ترین صدر ہوں گے۔ انہوں نے 74 سالہ ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دی ہے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق انھوں نے صدارت کے لیے مقررہ 270 الیکٹورل کالج کا ہدف 290 الیکٹورل کالج ووٹس لے کر حاصل کر لیا ہے۔اے ایف پی کے مطابق جوبائیڈن نے سابق صدر باراک اوباما کے صدر 8 سال تک بطورِ نائب صدر فرائض انجام دیئے۔ برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی صدارتی انتخاب کی تاریخ میں ویسے تو یہ دس مرتبہ ہو چکا ہے کہ کوئی صدر اپنے پہلی مدتِ صدارت کے بعد ہی ہار گئے لیکن حالیہ دور میں ایسا چوتھی مرتبہ ہوا ہے کہ کوئی امریکی صدر پہلی مدتِ صدارت کے بعد ہی ہار گئے ہیں۔ صدر ٹرمپ مجموعی طور پر 11ویں اور حالیہ دور میں چوتھے ایسے صدر بن گئے ہیں۔ اس سے قبل ایسا 1992 میں ہوا تھا جب بل کلنٹن نے جارج ایچ ڈبلیو بش (سینیئر) کو پہلی مدتِ صدارت کے بعد شکست دی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں