ہر روز کروڑوں روپے کمانے والے پاکستانی باپ بیٹا پکڑے گئے غیر ملکی سفارتخانوں کے نام پر بیرون ملک سے کیا چیز منگواتے تھے کون کون سی بڑی شخصیات کی مدد حاصل تھی، ناقابل یقین رپورٹ

ہر روز کروڑوں روپے کمانے والے پاکستانی باپ بیٹا پکڑے گئے غیر ملکی سفارتخانوں کے نام پر بیرون ملک سے کیا چیز منگواتے تھے کون کون سی بڑی شخصیات کی مدد حاصل تھی، ناقابل یقین رپورٹاسلام آباد(احسان بخاری /سپیشل رپورٹر)کلکٹریٹ آف کسٹمز اسلام آبادنے حیدرآباد کسٹمز انٹیلی جنس کے ہمراہ ایف سکس میں چھاپہ مار کر متحدہ عرب امارات کے اسلام آباد میں قائم سفارتخانہ کے نام پر بیرون ملک سے امپورٹ کی گئی کروڑوں روپے کی شراب سے بھرے کنٹینر کے سمگلر باپ

بیٹے کو گرفتار کرلیاہے۔باوثوق ذرائع نے روزنامہ اوصاف کو بتایا کہ حیدر آباد کسٹمز انٹیلی جنس کو مخبری ہوئی کہ ایک کنٹینر سے بیرون ملک سے کروڑوں روپے کے منگوائی گئی قیمتی شراب سے بھرا کنٹینر کراچی کسٹمز حکام کلیئر کریں گے جو بعدازاں براستہ حیدرآباد شراب سے بھرا کنٹینر متحدہ عرب امارات کے اسلام آباد میں قائم سفارتخانہ کے نام پر بحفاظت کے جایا جائے گا جس پر بتائی گئی مخبری پر ناکہ بندی کرکے کنٹینر کی جگہ غیر ملکی شراب سے بھرا ٹرک پکڑا گیاجس میں سوار ملزمان نے انکشاف کیا کہ یہ غیر ملکی شراب بین الااقوامی منظم گینگ کے رکن طارق سلیم اور اسکے بیٹے شہزاد امان طارق جو کہ ایف سکس اسلام آباد میں موجود ہیں کی شراب ہے اور وہ یہ دھندہ دس سال سے زائد عرصہ سے کررہے ہیں اور مختلف سفارتخانوں کے نام پر وزارت خارجہ سے متعلقہ افسران سے مبینہ ملی بھگت کرکے غیرملکی شراب منگواکر کھلے عام مارکیٹ میں فروخت کرکے یومیہ کروڑوں روپے کماتے ہیں جس میں تمام متعلقہ شعبوں میں موجودمتعدد افسران و اہلکار بھی اس نیٹ ورک کے مبینہ ہمنوا ہیں جو انکے لئے ہمہ وقت مددگار ثابت ہوتے ہیں جس پر حیدرآباد کسٹمز انٹیلی جنس نے تمام تر ہوم ورک مکمل کرنے کے بعد اسلام آباد کسٹمز حکام سے رابطہ کرکے خطرناک اور نہایت بااثر غیر ملکی شراب فروش مافیا کے کارندے باپ بیٹے کوایف سکس سے گرفتار کرنے کیلئے مدد طلب کی جس پر اسلام آباد کسٹمز کلکٹریٹ نے انکی بھر پور مدد کرکے ملزمان باپ بیٹے کو گرفتار کروایا جنہیں حیدرآباد کسٹمز انٹیلی جنس کی خصوصی ٹیم اپنی تحویل میں لیکر واپس حیدرآباد روانہ ہوگئی ہے ۔ ذرائع نے مذید بتایا کہ اس منظم گینگ میں مبینہ طور پر نہایت بااثر اوراہم حکومتی شخصیات کی تعلق دار کئی بہت ماڈریٹ خواتین بھی شامل ہیں جنہیں پاکستان کی علاقائی زبانیں ہی نہیں بلکہ انگریزی زبان سمیت درجنوں ممالک کی زبانوں پربھی عبورحاصل ہے جو اس منظم نیٹ ورک میں شامل ہیں اور وہی مختلف

سفارتخانوں اور حکومتی شخصیات سے نیٹ ورک کے کرتا دھرتاوں کی ہدایت پر انکے کارندوں کی میٹنگز طے کرواتی ہیں جن میں مبینہ طور پر انہیں بھاری رقوم پیشگی ادا کردی جاتی ہیں ۔ زرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ صوبہ سندھ کی کسٹمز انٹیلی جنس نے وقوعہ کا فوری مقدمہ درج کرکے مکمل طور پر خفیہ انداز میں کارروائی عمل میں لائی جبکہ گرفتار کئے گئے باپ بیٹے نے ڈپلومیٹک انکلیو میں انہی بعض حکومتی شخصیات کی مبینہ ملی بھگت سے سلیم اینڈ کو کے نام سے ایک اپنا بظاہر دکھاوے کیلئے دفتر بھی قائم کر رکھاہے جبکہ گرفتار ستر سالہ طارق سلیم نے حال ہی میں ایک خوبرو نوجوان بائیس سالہ لڑکی سے شادی بھی کررکھی ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں