بڑے بڑوں کو چھوٹ ۔۔۔! حکومت نے کالا دھن جمع کرنے والوں کو ایک اور بڑی خوشخبری سنا دی

اسلام آباد (ویب ڈیسک )پاکستان تحریک انصاف نے دو سالہ دور حکومت کے دوران تیسری مرتبہ ایمنسٹی سکیم لانے پر غور شرو ع کر دیا ہے تاکہ غیر ملکی کرنسی کے گھٹتے ہوئے ذخائر کو سنبھالا دیا جا سکے ، ایمنسٹی میں پاکستانی شہری اپنے کالے دھن کو سفید کر سکیں گے ۔

ایکسپریس ٹریبیون نے اپنی رپورٹ میں وزیراعظم آفس کے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیاہے کہ فنانشنل ایکشن ٹاسک فورس اور انٹر نیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف ) دراصل سکیم کو عملی جامہ پہنانے کی راہ میں رکاوٹ ہیں ۔وزیراعظم عمران خان نے شہریوں کو اپنا کالا دھن سفید کرنے کا ایک اور موقع دینے پر غور شروع کر دیا ہے ، زیر غور سکیم دراصل گورنر سٹیٹ بینک رضا باقر کا آئیڈیا ہے ۔ایکسپریس ٹریبیون کا اپنی رپورٹ میں کہناتھا کہ تین افراد اس پیش رفت سے آگاہ ہیں اور ان کے مطابق پاکستان کے رہائشیوں سے امریکی ڈالر خریدنے کے وسائل کے بارے میں نہیں پوچھا جائے گا اور انہیں ٹیکس میں بھی چھوٹ دی جائے گی۔ رپورٹ کے مطابق ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستانیوں کو سینٹرل ڈائریکٹوریٹ آف نیشنل سیونگ سکیمز (سی ڈی این ایس) میں ایک سے دو سال کے لئے اپنے ڈالرز کو پاکستانی کرنسی(روپے) کے ڈی نومینیٹڈ سرٹیفکیٹ کے ساتھ تبادلہ کرنے کے لئے کہا جاسکتا ہے ۔لوگوں کو راغب کرنے کیلئے حکومت ” لندن انٹر بینک آفرڈ ریٹ “ کے علاوہ تین سے چار فیصد انٹرسٹ کی پیشکش پر بھی غور کر رہی ہے ۔پاکستانی رہائشیوں کوموجود ہ دن کے ایکسچینج ریٹ پر ڈالرز کے تبادلے کی پیشکش کی جا سکتی ہے ۔بانڈز اور سرٹیفکیٹس کے میچور ہونے پر انہیں انٹرسٹ کے علاوہ میچور ہونے والے دن کے ایکسچینج ریٹ کے حساب سے اصل رقم دی جائے گی ۔وزارت خزانہ اور ایف بی آر کے اعلیٰ حکام کی جانب سے تصدیق کی گئی ہے کہ مرکزی بینک کی جانب سے ایمنسٹی سکیم کی تجویز دی گئی ہے ، وزیراعظم آفس کے ذرائع کا کہناہے کہ اس تجویز پر وزیراعظم عمران خان کے ساتھ مشاور ت بھی کی گئی ہے ۔حکام کو ایمنسٹی سکیم لانے کیلئے پہلے فیفٹ اور آئی ایم ایف کو رضا مند کرنا ہو گا جو کہ اس کی راہ میں رکاوٹ ہیں ۔