ریسکیو 1122 میں بڑے گھپلوں کا انکشاف ۔۔۔۔ ایسے اعداد وشمار سامنے آگئے کہ آپ سر پکڑ لیں گے

لاہور (ویب ڈیسک) ریسکیو1122 میں بھاری بدعنوانی کا انکشاف سامنے آیا ہے،ریسکیو1122میں اڑھائی ارب روپے سے زائد بدعنوانی کا انکشاف یوا ہے، محکمہ انسداد بدعنوانی نے ڈی جی ریسکیو کو طلب کرلیا۔ تفصیلات کے مطابق ریسکیو1122 سروس میں مبینہ طور پر دو ارب سے زائد کی بد عنوانی کا انکشاف ہوا ہے، ریسکیو 1122 میں

تحقیقات محکمہ انسداد بد عنوانی کر رہا تھا، تحقیقات کے سلسلےمیں محکمےنے ڈی جی ریسکیو 1122 رضوان نصیر کو 26 اکتوبر کو طلب کر لیا ہے۔ذرائع کے مطابق ریسکیو 1122 سروس میں مبینہ طور پر ڈھائی ارب سے زائد کی بدعنوانی میں محکمہ اینٹی کرپشن نے ریسکیو 1122 کے ڈائریکٹر جنرل سمیت دیگر افسران کو26 اکتوبر کو طلب کرلیا ہے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق ریسکیو 1122 میں مبینہ طور پر 2 ارب 57 کروڑ کی بدعنوانی پر محکمہ اینٹی کرپشن تحقیقات کررہا ہے، تحقیقات کے عمل کو 6 حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق ریسکیو 1122 کے حکام کی جانب سے پرنٹنگ کے ٹھیکوں سے من پسندافراد کو نوازنے، بوگس کمپنیوں کے ذریعے ادویات کی خریداری جیسے گھپلے سامنے آئے ہیں، جن کے مطابق بلیک لسٹ کمپنیوں کو تقریبا 3 کروڑ کے غیر قانونی ٹھیکے دیئے گئے، غیر قانونی بھرتیاں اور تقرریاں کی گئیں، اور ایک جعلی کمپنی احمد میڈیکس کے ذریعے ریسکیو وہیکلز خریدی گئیں۔