پاکستان کا وہ محکمہ جس میں حق مانگنے پر 25خاتون افسران کے موبائل نمبرز غیر اخلاقی ویب سائٹ پر ڈال دئیے گئے

کراچی (ویب ڈیسک ) محکمہ سوشل ویلفیئرکی خواتین افسران کو موبائل فون پر ہ راساں کیے جانے کا انکشاف ہوا ہے۔وفاقی تحقیقاتی ایجنسی کے مطابق محکمہ سوشل ویلفیئر کی ایک خاتون افسر نے شکایت کی ہے کہ محکمے کی 25 کمیشنڈ افسران کو ہ راساں کیا جارہا ہے۔نجی نیوز چینل جیو کے مطابق ایف اے اے حکام نے

بتا یا خواتین افسران نے اپنی سینیارٹی کو کلیم کرنے کے لیے سندھ ہائی کورٹ میں پٹیشن دائر کی تھی اور پٹیشن کے بعد ہی خواتین افسران کے موبائل نمبرز غیر اخلاقی ویب سائٹس پر ڈال دیے گئے۔خواتین افسران کو ملکی اور غیر ملکی نمبرز سے غیراخلاقی پیغامات اورکالز موصول ہورہی ہیں۔ایف آئی اے حکام کاکہنا ہے کہ خاتون افسرکی شکایت پر سائبرکرائم کی جانب سےباقاعدہ انکوائری شروع کردی گئی ہے، خواتین کے نمبرز لیک کرنے میں متعلقہ محکمے کا ہی کوئی اہلکار ملوث ہے۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے سربراہان مملکت کے اخراجات کے تعین کیلئے بل لانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا قوم کی آمدن کومد نظر سربراہان کے اخراجات کا تعین ہونا چاہیے۔وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا، جس میں ملکی موجودہ سیاسی اور سلامتی کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا اور ملک میں مہنگائی کی صورت حال پرکابینہ میں کھل کربحث ہوئی۔بعض وزرا نے بڑھتی مہنگائی پر اظہار تشویش کرتے ہوئے ہنگامی اقدامات کا مطالبہ کیا، مراد سعید،شیخ رشید، فیصل واوڈا اور دیگر وزرا نے مہنگائی کا معاملہ اٹھایا۔وزیراعظم عمران خان نے مہنگائی میں کمی کیلئے ہنگامی اقدامات کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا مشاورت جاری ہےحکومت جلدایکشن پلان پر عمل شروع کرےگی۔فیصل واوڈا نے سابق اعلی ٰحکومتی شخصیات سے مراعات کی واپسی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا سابق صدور،گورنر اور وزرائےاعلیٰ کودی گئی غیرضروری مراعات واپس لی جائیں، حکومت کفایت شعاری مہم پر عمل کر رہی ہے، سابق حکومتی شخصیات غیر ضروری مراعات کی مستحق نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں