آصف زرداری اسپتال داخل! خفیہ مُلاقاتیں شروع، پسِ پردہ کیا معاملات طے کیے جا رہے ہیں؟ (ن)لیگ کی پریشانیوں میں اضافہ

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) حکومت کی طرف سے سیاسی معاملات پر نظر ثانی کرتے ہوئے اپوزیشن کے ساتھ سیاسی ورکنگ تعلق قائم کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ، جس کے تحت اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ بات چیت کا سلسلہ شروع کیا جائے گا ، یہ سلسلہ بظاہر تو سب جماعتوں کے لیے ہوگا ، لیکن درحقیقت یہ بات چیت

پاکستان پیپلزپارٹی کے ساتھ کی جائے گی ، جس کے لیے پس پردہ خفیہ ملاقاتیں اس وقت بھی جاری ہیں ، جن میں ایک بار پھر بات چیت کا عمل شروع ہوچکا ہے ، جس کا اہم اشارہ سابق صدر آصف علی زرداری کا اچانک شدید علیل ہوکر ہسپتال داخل ہوجانا ہے ، ان خیالات کا اظہار صحافی و تجزیہ کار صابر شاکر نے کیا ۔تفصیلات کے مطابق اپنے یوٹیوب چینل پر گفتگومیں تجزیہ کار و صحافی صابر شاکر نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین سابق صدر آصف علی زرداری کے ہسپتال جانے میں ایک بڑی وجہ سیاسی ہے ، جہاں صرف ’ضروری‘ ملاقاتیں کی جائیں گی ، کیوں کہ جب بھی اہم شخصیات بیمار پڑتی ہیں تو ان کے پیچھے بہت سی اہم چیزیں چھپی ہوتی ہیں ، اس دوران کچھ اہم مصروفیات چل رہی ہوتی ہیں ، جن کے بارے میں کچھ روز بعد پتا چلتا ہے کہ ہسپتال بیماری کی وجہ سے نہیں بلکہ کچھ اہم ملاقاتوں کے لیے داخل ہوئے۔تجزیہ کار صابر شاکر نے کہا کہ پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ ( پی ڈی ایم ) کی طرف سے اچانک جلسوں کے اعلان پر پیپلزپارٹی ناخوش ہوئی ، جس کی وجہ سے کوئٹہ کا جلسہ بعد میں کراچی میں سانحہ کارساز کی تاریخ کو رکھ کر پی پی کو راضی کیا گیا ، تاہم اس کے بعد گوجرانوالہ میں بھی ایک جلسہ رکھا گیا جب کہ پی ڈی ایم نے طے کیا تھا کہ سب کچھ متفقہ طور پر ہوگا تاہم پیپلزپارٹی سمجھتی ہے کہ گوجرانوالہ کا جلسہ صرف مسلم لیگ ن کی سولوفلائٹ ہے ، اور اس کے ذریعے پی پی کو سائیڈ لائن کیا جارہا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں