جانے کس گناہ کی سزا مل رہی ہے ، مگر تازہ ترین خبر یہ ہے کہ ان نکموں کا راج جلد ختم ہونے والا نہیں ۔۔۔ ایاز امیر نے حیران کن بات کہہ ڈالی

لاہور (ویب ڈیسک) اکستانی سیاست کا اٹل اصول بن چکا ہے کہ نعرے لگانا ایک چیز ہے اورپیسے کمانا بالکل مختلف کام۔ ان کا جوڑ کہیں نہیں ہوتا سوائے الیکشن کے زمانے میں جب الیکشن کے نتائج ہموار کرنے کیلئے پیسوں کی کھپت کی ضرورت پڑتی ہے۔ بہرحال مقصد پی ڈی ایم کو

نامور کالم نگار ایاز امیر اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔ہدف تنقید بنانا نہیں۔ سیاست میں کچھ نہ کچھ گہماگہمی ہونی چاہیے اور نوازشریف اور مولانا فضل الرحمن نے مل کر کچھ نہ کچھ ہلچل پیدا کر دی ہے۔ نکمّوں کا علاج بھی یہی ہے۔ پریشر رہنا چاہیے نہیں تو نکمّے بھی اپنے آپ کو عقلِ کل سمجھنے لگ پڑتے ہیں۔ لیکن ٹی وی سکرینوں اوراخبارات کے کالموں سے نکل کر آپ وہاں کا رخ کریں جہاں بیشتر پاکستانی آبادی رہتی ہے تو پتا چلے گا کہ اس وقت عوام کی دلچسپی نہ حکومت میں ہے نہ جمہوریت کے نعرے مارنے والوں میں۔ گندم کے علاوہ یہ مہینہ ہے سردی کی سبزیاں اگانے کا۔ اربابِ اختیار میں عقل ہو یا زراعت کے بارے میں معلومات ہوں تو ٹی وی پہ آئیں اور دیہی آبادی کو تلقین کریں کہ کیا کچھ کرنا چاہیے۔ باہرکے ملکوں میں بہت سی سبزی تو فارموں سے آتی ہے لیکن بہت سی ایسی سبزیاں بھی ہوتی ہیں جو چھوٹے چھوٹے پلاٹوں پہ اُگائی جاتی ہیں۔ بہت سے کاشتکار ہیں جو سبزیوں کی کاشت کی طرف مائل ہوچکے ہیں لیکن امر واقعہ تو یہ ہے کہ ہم سبزیوں کی پیداوار میں خود کفیل نہیں۔ کچھ سبزیاں انڈیا سے امپورٹ ہوتی ہیں۔ کتنے شرم کی بات ہے۔ کہنے کو ہم ایک زرعی ملک ہیں لیکن سبزیوں سے لے کر پام آئل تک ہم درآمد کرتے ہیں۔ یا تو ہم بہت بڑی انڈسٹریل قوت ہوتے اورمشینری اورہوائی جہاز بنا رہے ہوتے‘ لیکن ان چیزوں میں بھی گداگر‘ اورکھانے پینے کی چیزیں بھی

باہر سے منگوانا پڑتی ہیں۔ لے دے کے ایک نظریہ رہ گیاہے۔ اس میں ہم خود کفیل ہیں۔ اس حکومت کے کاموں کو دیکھیے۔ ابھی لاہور ریور (river) فرنٹ پروجیکٹ کے شوشے کی بازگشت تھمی نہیں کہ کراچی سے باہر سمندر میں جو دو بڑے جزیرے ہیں ان کے بارے میں ایک شوشہ چھوڑدیا گیا ہے۔ کہاجا رہاہے کہ ان جزیروں کو ڈویلپ کیاجائے گا۔ ایک صاحب نے تو یہاں تک کہا ہے کہ دبئی پیچھے رہ جائے گا۔ روزمرّہ کی کارکردگی کو تو تھوڑا بہتر کرلیں، شوشوں پہ پھر دھیان دیاجا سکتاہے۔ لیکن اس حکومت کی باتیں ہی نرالی ہیں۔ اب تو ان کے حمایتی بھی پریشان لگتے ہیں کیونکہ کہنے کو کچھ زیادہ رہا نہیں۔ بہرحال خدا جانے کن گناہوں کی سزا پاکستانی عوام بھگت رہے ہیں۔ یہ کہنا آسان ہے کہ عوام کا بڑا گناہ تو یہ ہے کہ وہ ایسے حکمران چنتے ہیں اور پھر انہیں برداشت کرتے ہیں‘ لیکن یہ الزام بنتا نہیں۔ عوام سے کسی نے پوچھا ہوتا پھر تو بات تھی، یہاں تو فیصلے عوام سے بالا بالا ہی ہو جاتے ہیں۔ ایک بار حکمران مسلط ہو جائیں تو عوام کے پاس کوئی اختیار نہیں رہتا کہ انہیں ہٹا سکیں۔ یہ سب کتابی باتیں ہیں کہ آخری فیصلہ عوام کا ہوتا ہے۔ ہماری مملکت میں عوام کی حیثیت کیا ہے؟ ملکی وسائل پہ چند طبقات بیٹھے ہیں اور قوم کی تقدیر کے فیصلے وہی کرتے ہیں۔ یہ اور بات ہے کہ اُن طبقات کے سوچنے کی صلاحیت محدود ہے۔ بیشتر اوقات سوچ اُن کی اپنی نہیں ہوتی۔

پہلے ان طبقات نے امریکا کو سر پہ بٹھایا ہوا تھا۔ جو فیصلے امریکا کے حق میں ہوتے تھے وہ یہ طبقات کر ڈالتے تھے۔ عوام کو ان پالیسیوں کے نتائج بھگتنے پڑتے تھے۔ اب حکمران طبقات نے اپنی قسمت چین کے ساتھ جوڑی ہوئی ہے۔ اُن کی گفتگو سنیں تو لگتا ہے کہ پاکستان کی تقدیر سنورے گی تو چین کی بدولت‘ یعنی اپنی سوچ ہماری ہے ہی نہیں۔ اپنی سوچ نہ ہونے کی ایک وجہ یہ ہے کہ پاکستانی اشرافیہ کے طبقات کو خریدنا اتنا مشکل نہیں۔ نہ صرف یہ بلکہ پاکستانی سوچ ہموار کرنا اور جو انگریزی کا لفظ ہے مولڈ (mould) کرنا آسان ہے۔ نام نہاد افغان جہاد کے جب ڈھول پیٹے گئے تو سارا ملک اس طرف لگ گیا۔ کسی متبادل رائے کی جگہ ہی نہ چھوڑی گئی۔ اب سی پیک کا ڈھنڈورا پیٹا جا رہا ہے اور متبادل سوچ کی کوئی گنجائش نہیں چھوڑی جا رہی۔ بیشتر عوام سی پیک کے بارے میں زیادہ معلومات نہیں رکھتے۔ معاشی اعتبار سے پاکستان سی پیک کے منصوبوں کا کیسے فائدہ اٹھائے گا، منظر عام پہ ایسی باتوں کا ذکر عموماً نہیں ہوتا۔ قرضہ جات کیسے واپس ہوں گے، ایسی گفتگو بھی نہیں چھیڑی جاتی‘ جس کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ سی پیک کے منصوبے ملک کے فائدے میں نہیں لیکن کم از کم تفصیلات تو سامنے آنی چاہئیں۔ تفصیلات کے بارے میں یہاں پرہیز برتی جاتی ہے۔ بس چل رہا ہے اور چلتا رہے گا۔ ایک بات البتہ طے ہے کہ نکمّوں کا راج کہیں جلد ختم ہونے والا نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں