بریکنگ نیوز:متحدہ عرب امارات اور بحرین کے بعد ایک اور عرب اسلامی ملک نے اسرائیل کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دے دی ، امت مسلمہ کو جھنجوڑ دینے والی خبر

تل ابیب(ویب ڈیسک) اردن خلیجی اور ایشیائی ممالک تک رسائی کے لیے اسرائیل کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے دے گا۔ تفصیلات کے مطابق اسرائیل اور اردن میں فضائی حدود کا معاہدہ طے پا گیا ہے۔ اسرائیل اور اردن کے معاہدے میں طے کیا گیا ہے کہ اسرائیلی پروازیں خلیجی ممالک اور مشرقی ایشیائی ممالک تک

رسائی کے لیے اردن کی فضائی حدود استعمال کریں گی۔اسرائیلی حکام کے مطابق اردن کی فضائی حدود میں پروازوں کو سفر کی اجازت کے بعد خلیجی ممالک اور مشرقی ایشیا تک سفر کے دورانیے میں کمی واقع ہوگی۔ خلیجی ریاستوں اور ایشیائی ممالک کے سفر کے دورانیے میں کمی ساتھ اسرائیل کو ایندھن کی مد میں بھی لاکھوں ڈالرز کا فائدہ ہوگا۔ دونوں ممالک کے درمیان طے معاہدے کے مطابق اسرائیل ہر قسم کے سفر کے لیے اردن کی فضائی حدود استعمال کر سکے گا۔واضح رہے کہ اسرائیل نے فلسطین پر حملے کے بعد سے اسلامی ممالک کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کے لیے کوششیں شروع کی تھیں جس کے بعد امریکہ کی مدد سے متحدہ عرب امارات نے بھی اسرائیل کے لیے پروازیں چلانے کا اعلان کیا تھا۔ جبکہ بحرین نے بھی اسرائیل کے ساتھ مختلف معاہدوں پر دستخظ کیے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ بحرین نے اسرائیل کو ایک الگ ملک کی حیثیت سے تسلیم بھی کرلیا ہے۔یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کئی مرتبہ کہہ چکے ہیں کہ اسلامی ممالک اور اسرائیل کے درمیان کشیدگی ختم کرنے کے لیے وہ کوششیں کررہے ہیں۔ واضح رہے کہ اسرائیل مشرقی ایشیا میں اپنی پروازوں کے لیے اردن کی فضائی حدود استعمال کرے گا۔ سوائے پاکستان کے ایشیا کے دیگر ممالک کے ساتھ اسرائیل کے اچھے تعلقات ہیں اور ان ممالک میں اسرائیل کی پروازیں بھی جاتی ہیں۔ ان ممالک تک رسائی کے لیے اسرائیل اب اردن کی فضائی حدود استعمال کرے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں