بریکنگ نیوز: اُمت مسلمہ سمیت پوری دنیا دنگ رہ گئی۔۔!! اسرائیل کو تسلیم کریں گے یا نہیں؟ طالبان نے واضح اعلان کردیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک)اُمت مسلمہ سمیت پوری دنیا دنگ رہ گئی. افغانستان میں نظام حکومت چلانے کے لیے طالبان اور افغان دھڑوں کے درمیان مذاکرات قطر کے دارالحکومت دوحہ میں جاری ہیں ۔ اس حوالے سے طالبان ترجمان ڈاکٹر محمد نعیم نے کہا کہ ہمارا ارادہ ہے

بین الافغان مذاکرات افغانی خود آگے لیکر جائیں۔ ہم یہ چاہتے ہیں کہ مذاکرات جلد ہوجائیں اوران مذاکرات میں انشاء اللہ کوئی مشکل پیش نہیں آئے گی۔ مذاکرات میں اونچ نیچ آتی رہتی ہے اس لیے تھوڑاوقت چاہیے۔یہ نہیں کہہ سکتے کہ کون مخالفت کر رہاہے۔ افغانستان میں امن اوراسلامی نظام آناسب کی جیت ہے۔سارے یہی چاہتے ہیں کہ مسئلہ ختم ہوجائے۔دوسرے ممالک سے تعلقات کے حوالے سے طالبان نے کہاکہ ہم تمام پڑوسیوں سےاچھے تعلقات چاہتے ہیں۔ہم نہیں چاہتے کہ پڑوسیوں کے ساتھ کوئی مسئلہ ہو۔امید ہے آنے والے نظام میں پڑوسیوں سے اچھے تعلقات ہوںگے۔طالبان ترجمان نے فلسطینی مسلمانوں کے حوالے سے کہاکہ ہم نے ہمیشہ فلسطینی مسلمانوں پرہونے والے مظالم کے خلاف آواز اٹھائی ہے۔ اسرائیل سے تعلقات نہیں بنا سکتے۔ فلسطین مسلمانوں کا پہلا قبلہ ہے۔ہم سارے مسلمان ہیں اگر وہ ہماری مقدس جگہوں کی توہین کرتے ہیں تو ہم ان کے ساتھ رابطہ نہیں رکھ سکتے۔ جہاں تک پاکستان کی بات ہے تو دونوں ممالک میں ایک جیسی زبانیں بولی جاتی ہیں ہمارا کلچر ایک جیسا ہے ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے ساتھ ہمارے اچھے تعلقات ہوں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں