اقتدار کی بھوک یا پھر کچھ اور۔۔۔؟؟ مریم نواز آخر حمزہ شہباز کو کیوں ناپسند کرتی تھیں؟ جان کر آپ بھی شریف خاندان کی تباہی کی سب سے بڑی ذمہ دار ’’لاڈو رانی‘‘ کو قرار دیں گے

لاہور (ویب ڈیسک) شریف فیملی آج جس دہانے پر کھڑی ہے اس کی سب سے بڑی ذمہ دار مریم نواز ہے۔ مریم نواز اعلیٰ پارٹی قیادت کو نظر انداز کر رکے اپنا علیحدہ سے حلقہ بنا رکھا ہے، جو مریم نواز کو وہی مشورے دیتا جس میں وقتی فائدہ اور مخالفین پر تیکھے وار شامل ہوں۔

اس بات میں کوئی دو رائے نہیں ہیں کہ شریف فیملی میں بھی اقتدار کیلئے لڑائی چل رہے ہے مریم نواز کسی صورت میں بھی پارٹی قیادت شہباز گروپ کے حوالے کرنے کو تیار نہیں جس کی زندہ مثال حمزہ شہباز کو این اے 120 کی الیکشن مہم سے ہٹایا جانا ہے۔ یہ سب سوچی سمجھی سازش کے تحت کیا گیا۔ یہ شریف فیملی کو نواز فیملی اور شہباز فیملی میں تقسیم ہونے کی واضح نشانی تھی۔ نواز فیملی جس کو مریم نواز لیڈ کر رہی ہیں وہ کبھی بھی وفاق میں شہباز فیملی کو آگے نہیں دے گی۔ شہباز شریف کو پارٹی صدر نہ بننے دینا، شہباز شریف کو لندن بلوا کر میاں صاحب کیلئے راستے خالی کروانا شامل ہے۔ سچ کہتے ہیں کہ سیاست اور اقتدار راشتہ داری نہیں دیکھتے، بھائی کو بھائی کا دشمن بنا دیتا ہے جس کی مثال شریف فیملی ہے۔ نواز شریف کی مشکلات میں اس وقت اضافہ ہوا جب مریم نواز کو سوشل میڈیا اور دیگر پارٹی اجلاسوں کا اختیار دیا گیا تھا نواز شریف کی بیماری کے وقت تمام تر اختیارات مریم نواز کے پاس آگئے تھے جس کے دوران اس کو ایسے مزید ملے جنہوں نے پارٹی کو توڑنے میں اپنا کردار ادا کیا۔