آذربائیجان کا کسی بھی حال میں پیچھے نہ ہٹنے کا اعلان

باکو (نیوز ڈیسک ) آذربائیجان نے اعلان کیا ہے کہ کسی صورت پیچھے نہیں ہٹیں گے، مقبوضہ علاقوں کو آزاد کروائیں گے، آرمینیا کی فوج کو شکست کا مزا چکھا کر دم لیں گے، آرمینیا کی مسلح افواج غیر مشروط، مکمل اور فوری طور پر ہماری سرزمین خالی کر دے تو تب بھی لڑائی بند ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق آذربائیجان نے کہا ہے کہ وہ آرمینیا کی فوج کو پسپائی کا مزا چکھا کر دم لیں گے۔عالمی برادری کی جانب سے جنگ بندی کے مطالبے پر آذربائیجان کے صدر الہام علی اف نے کہا ہے کہ ہماری صرف ایک شرط ہے کہ آرمینیا کی مسلح افواج غیر مشروط، مکمل اور فوری طور پر ہماری سرزمین خالی کر دیں۔ آذربائیجان کے صدر نے کہا ہے کہ اگر آرمینیا کی حکومت مقبوضہ علاقوں سے مکمل انخلا کے ہمارے مطالبے کو پورا کرتی ہے تو جنگ اور خون ریزی ختم ہو جائے گی، خطے میں امن قائم ہوگا۔ورنہ متنازعہ علاقے کاراباخ سے آرمینیا کی فوج کی مکمل پسائی تک فوجی کارروائی جاری رکھی جائے گی ۔ مزید کہا گیا ہے کہ باکو اپنے علاقے میں مسلط کی گئی جارحیت کے خاتمے، مکمل خود مختاری کے حصول اور امن کی بحالی تک جوابی وار جاری رکھے گا۔ واضح رہے کہ دونوں ممالک کی افواج کے درمیان جاری جھڑپوں میں اب تک درجنوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔آرمینیا کی فوج کو اب تک بھاری جانی و مالی نقصان ہوا ہے۔ آرمینیا نے یہ الزام بھی عائد کیا ہے کہ آذربائیجان کو ترکی کی حمایت حاصل ہے، جبکہ یہ خبریں بھی سامنے آئیں کہ اسرائیل بھی آذربائیجان کی مدد کر رہا ہے۔ اسی باعث آذربائیجان کی فوج آرمینیا کی فوج کا بھاری جانی و مالی نقصان کرنے میں کامیاب ہوئی ہے۔ جبکہ آذربائیجان کی فوج کچھ علاقوں کا قبضہ بھی ختم کروانے میں کامیاب ہو چکی ہے۔ واضح رہے کہ آذربائیجان اور آرمینیا کے درمیان کاراباخ نامی علاقے کے حوالے سے تنازعہ ہے جس پر آرمینیا نے 90 کی دہائی میں قبضہ کر لیا تھا۔ یہ آذربائیجان کا علاقہ ہے جس پر قبضے کے حصول کیلئے دونوں ممالک کے درمیان کئی خونریز جنگیں ہو چکی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں