ماہانہ 4 کروڑ روپے کیوں پہنچائے جا رہے؟ تہلکہ مچ گیا

لاہور(نیوز ڈیسک) سینئر تجزیہ کار اور صحافی ہارون الرشید نے نجی ٹی وی چینل پر اپنے پروگرام میں بتایا کہ وہ کئی دفاعی ماہرین سے ملاقات کر چکے ہیں اور ان ماہرین نے ان کو جن حالات سے آگاہ کیا وہ غور طلب معاملات ہیں۔ تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل پر اپنے پروگرام میں

گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے انہوں نے کہا کہ وہ جن دفاعی ماہرین سے ملے ہیں اور جنہوں نے یہ تجزیات دیئے ہیں ہارون الرشید کو ان کی ذہانت، دیانت اور اعانت پر مکمل بھروسہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماہرین کا خیال ہے بھارتی خفیہ ایجنسی “را” ویسے تو ہر وقت پاکستان کے خلاف برسرپیکار ہے اور ہمیشہ کسی نہ کسی سازش میں ملوث رہتی ہے مگر موجود صورتحال میں “را” پاکستان میں شرانگیزی پھیلانے کے لیے کراچی کو نشانہ بنا سکتی ہے۔ہارون الرشید نے یہ بھی انکشاف کیا کہ آصف زرداری ابھی تک بانی ایم کیوایم الطاف حسین سے رابطے میں ہیں اور ان کو ماہانہ4 کروڑ روپے پہنچائے جا رہے ہیں۔انہوں نے یہ بھی بتایا کہ دفاعی ماہرین کے مطابق بلوچستان میں بھی بھارت کی سرگرمیاں تیز ہو سکتی ہیں۔ دوسری جانب کرتارپور راہداری کے دوسری جانب بھارت میں کوئی ہلچل نوٹ کی گئی ہے جس کے بعد بھارت کو خبردار کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ بھارت اس راہداری کو بھی سبوتاژ کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ہارون الرشید نے یہ بھی سوال اٹھایا کہ آخر کیا وجہ ہے کہ اتنے سنگین مقدمات کے باوجود غیر ملکی ایجنسیز ابھی تک الطاف حسین کو بچانے میں لگی ہیں، انہوں نے یہ بھی انکشاف کیا کہ حکومت میں موجود ایم کیو ایم کے لوگوں میں سے بھی کچھ ابھی تک بانی ایم کیوایم سے رابطے میں ہیں۔دوسری جانب سابق صدر آصف علی زرداری بھی آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کریں گے ، چیلئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے تصدیق کردی ۔ تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ سابق صدر آصف علی زرداری 20

ستمبرکو اے پی سی میں وڈیولنک کےذریعےشرکت کریں گے ، جہاں پیپلزپارٹی کی طرف سے حکومت کے خلاف مشترکہ جدوجہد کیلئے اپوزیشن کے اتحاد کی پیش کی جائے گی ، اس کے ساتھ ساتھ اپوزیشن کے مشترکہ جلسوں اور ریلیوں کی تجویز بھی دی جائے گی ۔قبل ازیں لندن میں علاج کی غرض سے موجود سابق وزیراعظم نواز شریف نے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی جانب سے اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) میں ورچوئل شرکت کی دعوت قبول کرلی ۔ پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا سابق وزیراعظم و مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف سے رابطہ ہوا ۔بلاول بھٹو زرداری نے بتایا کہ نوازشریف سے کچھ دیر پہلے بات کی ہے اور ان سے خیریت دریافت کی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ نوازشریف کو آل پارٹیز کانفرنس میں ورچوئل شرکت کی دعوت دی ہے۔پیپلز پارٹی کے ذرائع کے مطابق نوازشریف نے اے پی سی میں ورچوئل شرکت پر رضا مندی ظاہر کردی ہے ۔ جبکہ مسلم لیگ ن نے اپوزیشن جماعتوں کی آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کیلئے اپنے 11رکنی وفد کا اعلان کردیا ، جس میں مریم نواز بھی شامل ہیں ۔ دوسری طرف مسلم لیگ ن نے آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کیلئے اپنے 11رکنی وفد کا اعلان کردیا ، مریم نواز بھی وفد میں شامل ہیں ۔اے پی سی میں شریک ہونے کیلئے مسلم لیگ ن کے 11 رکنی وفد کی قیادت قائد حزب اختلاف شہبازشریف کریں گے ، ان کے ساتھ مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نوازشریف بھی وفد کا حصہ ہوں گی ۔ مسلم لیگ نواز کی طرف سے اعلان کردہ دیگر ممبران مین سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی ، سابق وزیرداخلہ خواجہ آصف ، سابق وفاقی وزیر احسن اقبال ، قومی اسمبلی کے سابق اسپیکر ایازصادق بھی وفد میں شامل ہیں ، جبکہ سینیٹر پرویزرشید ، سابق وزیر ریلوے سعد رفیق ، مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثنااللہ ، امیرمقام اورسابق وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب بھی اے پی سی میں شرکت کرنے والے وفد کا حصلہ ہوں گی ۔