خصوصی عدالت نے ملزم کی اپیل سنتے ہی کیا ریمارکس دیئے؟ کمرہ ِعدالت میں سناٹا چھا گیا

لاہور (نیوز ڈیسک) سانحہ موٹروے، ملزم شفقت اینٹی ٹیررازم کورٹ میں پیش، ملزم کو نقاب پہنا کر عدالت میں کیوں پیش کیا گیا؟ معزز جج کا اعتراض، تفتیشی افسر کو شناخت پریڈ کی کارروائی جلد از جلد مکمل کرنے کی ہدایت، ملزم عدالت سے رحم کی اپیل کرتا رہا۔ تفصیلات کے مطابق آج پولیس نے ملزم شفقت

کو اینٹی ٹیررازم کورٹ میں پیش کیا گیا، دوران سماعت ملزم سے اسکا مؤقف جانا گیا، جس پر شفقت کا کہنا تھا کہ مجھ پر مہربانی کر دیں، عدالت نے پوچھا کہ کیا مہربانی کریں؟ جس پر شفقت کا کہنا تھا کہ مجھے چھوڑ دیا جائے، ملزم شفقت کا ؐؤقف سن کر عدالت نے کہا کہ اگر تم نے کچھ نہیں کیا تو پھر تمہیں چھوڑ دیا جائے گا، فی الحال تمہارا ڈی این اے میچ کر گیا ہے، عدالت نے کیس کی سماعت کو 29 ستمبر تک ملتوی کرتے ہوئے ملزم کو 6 روز کے لیے جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا ہے ، ملزم شفقت کی پیشی کے موقع پر عدالت میں سخت سیکورٹی کے انتظامات کیے گئے تھے جس کی وجہ سے احاطہ عدالت میں دیگر سائلین کو کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔


اپنا تبصرہ بھیجیں