بریکنگ نیوز:سرنڈر کرنے کا حکم ۔! !خاندان اور پارٹی قیادت کی اہم میٹنگ، نواز شریف کو ایسا مشورہ دے دیا کہ حکومت کی تمام اُمیدوں پرپانی پھر گیا

لاہور (ویب ڈیسک) خاندان اور پارٹی قیادت کی اہم میٹنگ۔ سابق وزیراعظم نوازشریف نے عدالتی فیصلے پر فیملی اور پارٹی قیادت سے مشاورت مکمل کرلی ہے، خاندان اور پارٹی قیادت نے مشورہ دیا ہے کہ پہلے علاج کرائیں پھر وطن واپس جائیں ، نوازشریف کے وطن واپس نہ آنے کا امکان ہے۔

نجی ٹی وی 92 نیوز نے ذرائع کے حوالے سے کہاہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف اسلام آباد ہائیکورٹ کے فیصلے پر فیملی اور پارٹی قیادت سے مشاورت مکمل کرلی ہے،نوازشریف نے عدالتی فیصلے پر قانونی ٹیم سے بھی مشاورت کی۔ذرائع کاکہنا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف کے وطن واپس نہ آنے کاامکان ہے، خاندان اورپارٹی قیادت نے مشورہ دیاہے کہ پہلے علاج کرائیں پھر وطن واپس جائیں۔ واضح رہے کہ اسلام آبادہائیکورٹ کے دورکنی بنچ نے نوازشریف کو سرنڈر کرنے کاحکم جاری کر رکھا ہے ۔دوسری جانب اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم نوازشریف کو 9 ستمبر کو پیش ہونے کا حکم د یدیا،جسٹس محسن اختر کیانی نے ریمارکس دیے کہ اگر نواز شریف مفرور ہیں تو الگ 3 سال قید کی سزا ہوسکتی ہے، ٹرائل یا اپیل میں پیشی سے فرار ہونا بھی جرم ہے،جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ ہم نواز شریف کو اس وقت مفرور قرار نہیں دے رہے، لیکن ان کے بغیر اپیل کیسے سنی جاسکتی ہے، اس حوالے سے ہم نیب سے بھی معاونت لیں گے کہ وہ کیا کہتے ہیں، اگر نواز شریف کی غیر حاضری میں اپیل خارج ہوگئی تو کیا ہوگا؟ اگر عدالت نواز شریف کو مفرور ڈیکلیئر کر دے تو پھر اپیل کا کیا اسٹیٹس ہو گا؟ ،ہم ایک تاریخ دیں گے جس پر نواز شریف سرینڈر کریں اس لیے ابھی ہم نواز شریف کو مفرور ڈیکلیئر نہیں کر رہے، ہم نواز شریف کو سرینڈر کرنے کے لیے ایک موقع فراہم کر رہے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں