بریکنگ نیوز: عاصم سلیم باجوہ کا استعفیٰ منظور کیوں نہیں کیا گیا ؟ اصل اور حیران کن وجہ سامنے آگئی

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان نے معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ کا استعفیٰ نامنظور کر تے ہوئے انہیں کام جاری رکھنے کی ہدایت کی ہے ۔جمعہ کو وزیراعظم آفس کے میڈیا ونگ سے جاری بیان کے مطابق لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ نے

وزیر اعظم عمران خان کو اپنا استعفیٰ پیش کیا جو وزیر اعظم نے قبول نہیں کیا۔وزیر اعظم نے کہا کہ لیفٹیننٹ جنرل(ر) عاصم سلیم باجوہ کی جانب سے جو ثبوت اور وضاحت پیش کی گئی ہے وہ اس سے مطمئن ہیں لہٰذا وزیر اعظم نے انہیں بطور معاون خصوصی کام جاری رکھنے کی ہدایت کی ہے۔دریں اثناءعمران خان نے کہا ہے کہ جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کے قیام سے پی ٹی آئی حکومت نے جنوبی پنجاب کے عوام سے کیا گیا وعدہ وفا کیا ہے‘ ماضی میں جنوبی پنجاب کے عوام اور ان کے مسائل کے حل کو نظر انداز کیا جاتا رہا، جنوبی پنجاب کے لئے علیحدہ سالانہ ترقیاتی پروگرام سے علاقے میں تعمیر و ترقی کا نیا باب روشن ہو گا‘جنوبی پنجاب کو اختیارات کی منتقلی مرحلہ وار ہوگی‘عوام کی زندگیوں میں بہتری لانا پی ٹی آئی حکومت کی اولین ترجیح ہے‘حکومتی اقدامات کے لوگوں کی زندگیوں پر مثبت اثرات واضح نظر آنے چاہئیں۔ ان خیالات کا اظہارانہوں نے جمعہ کو اپنی زیر صدارت جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کے قیام اور ورکنگ کے حوالے سے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی نے آئندہ سال بجٹ کے حوالے سے جنوبی پنجاب کے لئے علیحدہ سالانہ ترقیاتی پروگرام اور پنجاب پبلک سروس کمیشن کے تحت ملازمتوں اور دیگر نوکریوں کے حوالے سے جنوبی پنجاب کے عوام کےلئے کوٹے کی تجویز پیش کی۔وزیرِ اعلیٰ پنجاب نےوزیرِ اعظم کو بتایا کہ جنوبی پنجاب کے لئے سیکرٹریٹ کا قیام عمل میں لایا جا چکا ہے، اس حوالے سے پنجاب گورنمنٹ کے رولز آف بزنس میں ترمیم کی جا چکی ہے اور اب تک سولہ سیکرٹری صاحبان کی جنوبی پنجاب میں تعیناتی کی جا چکی ہے۔وزیرِ اعظم کو بتایا گیا گیا کہ 15اکتوبر 2020 سے جنوبی پنجاب سیکرٹیریٹ باقاعدہ کام شروع کر دے گا۔عمران خان نے جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کے قیام کے حوالے سے عملی اقدامات اٹھانے پر وزیرِ اعلیٰ پنجاب اور پنجاب حکومت کی کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب کو شناخت دینے کے حوالے سے عملی اقدمات پی ٹی آئی حکومت کی جنوبی پنجاب کے عوام سے دلی وابستگی، ان کی مشکلات کا ادراک و حل اورحکومتی منشور کو عملی جامہ پہنانے کا ثبوت ہے۔وزیرِ اعظم نے صوبائی مالیاتی ایوارڈ کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب کے لئے علیحدہ سالانہ ترقیاتی پروگرام سے علاقے میں تعمیر و ترقی کا نیا باب روشن ہوگا۔وزیرِ اعظم نے اس امر پر زور دیا کہ پی ٹی آئی حکومت کی اولین ترجیح عوام کی زندگیوں میں بہتری لانا ہے۔انہوں نے جنوبی پنجاب انتظامیہ کو ہدایت کی کہ حکومتی اقدامات کے لوگوں کی زندگیوں پر مثبت اثرات واضح نظر آنے چاہئیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں