نئے پاکستان کی نئی 5 سالہ تجارتی پالیسی تیار: کون کون سی اہم ترین اشیاء اب صرف پاکستان کی بنی ہوئی استعمال کی جائیں گی؟ برانڈ برانڈ کرنے والوں کے کام کی خبر

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وزارت تجارت نے 2 سال کی تاخیر کے بعد بالآخر 5 سالہ تجارتی پالیسی کا مسودہ تیار کر لیا۔وزارت تجارت کے حکام کے مطابق 5 سالہ تجارتی پالیسی 25-2020کا حتمی ڈرافت تیار کر لیا ہے جس میں برآمدات کے فروغ اور ‘میڈ ان پاکستان’ پالیسی ترجیحات ہیں۔

حکام کے مطابق نئی پالیسی میں برآمداتی اہداف ملکی اور عالمی سپلائی چَین کو مد نظر رکھ کر تجویز کیےگئے ہیں۔آئندہ تجارتی پالیسی میں صعنتوں کی پیداواری لاگت کم کرنے، خام مال کی درآمد پر ٹیرف کم کرنے کی تجویز دی گئی ہے اور صعنتوں کے لیے شارٹ اور لانگ ٹرم فنانسنگ کی تجاویز دی گئی ہیں۔حکام کے مطابق آٹو پارٹس، فارماسیوٹیکل، انجینیئرنگ اور کیمیکل صعنت کو ریلیف دینے کی تجویز شامل ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ تجارتی پالیسی کے تحت پہلے برآمدات کا ہدف 2025 تک 46 ارب ڈالر تک بڑھانے کا پلان تھا تاہم نئے پلان کے تحت برآمدات 36 ارب ڈالر تک کم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔خیال رہے کہ آخری تجارتی پالیسی گزشتہ دور حکومت میں 2015 میں پیش کی گئی تھی، اس کے بعد سے نئی تجارتی پالیسی نہیں لائی جاسکی۔ حکام کے مطابق نئی پالیسی میں برآمداتی اہداف ملکی اور عالمی سپلائی چَین کو مد نظر رکھ کر تجویز کیےگئے ہیں۔آئندہ تجارتی پالیسی میں صعنتوں کی پیداواری لاگت کم کرنے، خام مال کی درآمد پر ٹیرف کم کرنے کی تجویز دی گئی ہے اور صعنتوں کے لیے شارٹ اور لانگ ٹرم فنانسنگ کی تجاویز دی گئی ہیں۔حکام کے مطابق آٹو پارٹس، فارماسیوٹیکل، انجینیئرنگ اور کیمیکل صعنت کو ریلیف دینے کی تجویز شامل ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ تجارتی پالیسی کے تحت پہلے برآمدات کا ہدف 2025 تک 46 ارب ڈالر تک بڑھانے کا پلان تھا تاہم نئے پلان کے تحت برآمدات 36 ارب ڈالر تک کم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔خیال رہے کہ آخری تجارتی پالیسی گزشتہ دور حکومت میں 2015 میں پیش کی گئی تھی، اس کے بعد سے نئی تجارتی پالیسی نہیں لائی جاسکی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں