ڈاکٹر ظفر مرزا کو کس اسکینڈل کی وجہ سے منصب سے ہاتھ دھونا پڑا ؟

اسلام آباد( نیوز ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا کو عہدے سے ہٹائے جانے کی وجہ سامنے آگئی ہے۔ نجی ٹی وی چینل دنیا نیوز نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے

کہ ڈاکٹرظفرمرزا ادویات کی قیمتیں کم کرانے میں ناکام رہے،ظفرمرزا نے بھارت سے ادویات کا خام مال درآم دکرنے کا معاملہ مس ہینڈل کیا،سپریم کورٹ کی آبزرویشن ظفرمرزا کے استعفے کی وجوہات میں شامل ہیں۔ دوسری جانب تانیہ ایدروس کے استعفوں کے حوالے سے نجی ٹی وی چینل کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ تانیہ ایدروس نے ڈیجیٹل پاکستان فاؤنڈیشن کے نام سے کمپنی بنارکھی تھی،تانیہ ایدروس کی کمپنی ایس ای سی پی سےرجسٹرڈتھی،تانیہ ایدروس کی کمپنی کےڈائریکٹرزمیں جہانگیرترین بھی شامل تھے۔ نجی ٹی وی چینل کی جانب سے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ جہانگیرترین کےوکیل بھی کمپنی کے ڈائریکٹرزمیں شامل ہیں،وزیراعظم آفس کی جانب سے تانیہ ایدروس کو مستعفی ہونے کا کہا گیا،ڈاکٹرظفرمرزا سے تسلی بخش کارکردگی نہ دکھانے پراستعفیٰ لیا گیا۔خیال رہے کہ وزیراعظم عمران خان کو اپنا استعفیٰ دینے کے بعد معاون خصوصی ڈاکٹر ظفر مرزا کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ایسےوقت عہدہ چھوڑاجب کوروناکم ہورہا ہے۔ بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی خدمت کرنا میرے لئے اعزاز کی بات ہے، معاونین پرتنقیدکےباعث مستعفی ہونےکا فیصلہ کیا ۔ ان کی جانب سے مزید کہا گیا ہے کہ پاکستانی شہریوں کوصحت کی بہترسہولتوں کی ضرورت ہے، ہم نے شعبہ صحت میں بہتری کے لئے مخلصانہ کاوشیں کیں، یہ جو پاکستانی قوم کے لیے کیا وہ اسکے حقدار تھے