بارش کے پانی کو واٹر ٹینکوں میں محفوظ کرکے دوبارہ قابلِ استعمال بنانے کا منصوبہ حقیقت بن گیا۔۔۔

لاہور (ویب ڈیسک) بزدار سرکار کا شاہکار۔ وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے لاہور کے شہریوں کی سہولت اور بارش کے پانی کو ذخیرہ کرنے کے لیے ایک منصوبہ لگایا ہے جس کے تحت بارش کے پانی کو انڈر گراؤنڈ ریزوائر کے ذریعے ایک پانی کے ٹینک تک لیجایا جائے گا۔

بارش کے پانی کو انڈر گراؤنڈ طریقے سے اب ذخیرہ کر کے دوسرے مقامات تک لے جایا جائے گا جہاں صاف پانی کو استعمال کیا جائے گا۔ اس منصوبے کو لاہور کے عوام کے لیے گیم چینجر سمجھا جا رہا ہے۔ اس منصوبے کے تحت لارنس روڈ کے قریب 149 ملین روپے کی لاگت سے منصوبہ تیار کیا گیا ہے جس کے ذریعے کوئنز روڈ پر جمع ہونے والے بارش کے پانی کو اب ذخیرہ کر کے دوبارہ استعمال میں لایا جا سکے گا۔ اس عمل کے لیے 18 سے 20 فٹ گہرا ٹینک بنایا گیا ہے یہ منصوبہ 3 ایکڑ پر پھیلا ہوا ہے جس میں 1 اعشاریہ 4 ملین گیلن پانی کو ذخیرہ کرنے کی اہلیت موجود ہے۔ اس علاقے سے جمع ہونے والے پانی کو ایک سلٹ کلیکٹر تک لیجایا جاتا ہے جہاں پانی سے پتھر اور کیچڑ کو صاف کیا جائے گا۔ اس کے بعد پانی کو آر سی سی ڈرین کی مدد سے ایک مقام پر بھیجا جائے گا جہاں اس پر تیرنے والی چیزوں کو نکال کر پانی کو صاف حالت میں قابل استعمال بنایا جائے گا۔ وزیراعلیٰ پنجاب کے ویژن کے مطابق لاہور میں اس طرح کے21 منصوبے لگائے جائیں گے تاکہ بارش ہونے کی صورت میں لاکھوں گیلن ضائع ہونے والے پانی کو بچا کر دیگر جگہوں پر استعمال میں لایا جائے۔ وزیراعلیٰ پنجاب اس طرح کے منصوبوں کو پورے لاہور کے بعد پنجاب کے دیگر شہروں میں پھیلانے کی سوچ بھی رکھتے ہیں تاہم فی الحال لاہور کے دیگر مقامات پر اس منصوبے کی فزیبلٹی رپورٹ تیار کی جا رہی ہے تاکہ اندازہ لگایا جا سکے کہ کن کن مقامات پر واٹر ٹینک بنا کر پانی کو ذخیرہ کیا جا سکتا ہے۔ اس پانی کو آب پاشی کے لیے استعمال کیا جا سکے گا اس کے علاوہ گاڑیوں کو دھونے کے لیے بھی استعمال میں لایا جائے گا۔