مسٹر عمران !!! اگر آپ نے یہ کام نہ کیا تو ہم اپنا تمام قرض۔۔۔ آئی ایم ایف نے کونسی 4 شرائط رکھ دیں؟ عوام پر بجلیاں گرا دینے والی خبر

اسلام آباد (ویب ڈیسک) عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے 4 شرائط رکھ دی گئیں، عملدرآمد نہ ہونے کی صورت میں اپنا پروگرام ختم کرنے کی دھمکی بھی دے ڈالی۔نجی ٹی وی 92 نیوز نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ آئی ایم ایف نے بجلی مہنگی کرنے، نیپرا ایکٹ میں ترمیم،

سٹیٹ بینک کو مکمل خود مختاری دینے اور ریونیو میں اضافے کی پالیسی فوری نافذ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ چاہتے ہیں کہ آئی ایم ایف کی نئی شرائط پر عملدرآمد یقینی بنایا جائے جبکہ ارکان اسمبلی کی اکثریت اس کی مخالف ہے۔عبدالحفیظ شیخ نے دھمکی ہے کہ اگر آئی ایم ایف پروگرام پورا نہ ہوا تو وہ اپنا عہدہ چھوڑ دیں گے۔ دوسری جانب ارکان اسمبلی کا کہنا ہے کہ اگر آئی ایم ایف کے مطالبات مان لیے گئے تو حکومت کی مقبولیت میں کمی آئے گی۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ سبسڈی کے پورے نظام کا بغور جائزہ لیا جائے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت معاشی تھنک ٹینک کا اجلاس ہوا جس میں معیشت سے متعلقہ ایشوز پر غور، سفارشات اور مستقبل کا جائزہ لیا گیا۔اجلاس میں بجلی،گیس، فرٹیلائزرز، یوٹیلٹی اسٹورز، برآمدات سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا۔وزیراعظم کو ہاؤسنگ،این ایچ اے اور دیگراداروں کے بجٹ اور سبسڈیز پر بریفنگ دی گئی۔اس موقع پر وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ سبسڈی کا مقصد غریب،مستحق افراد کی معاونت،ریلیف فراہم کرنا ہے،سبسڈی کے پورے نظام کا بغور جائزہ لیا جائے، یقینی بنایا جائے کہ سبسڈی کی رقم صرف ضرورت مندوں کو میسر آئے۔وزیراعظم نے مشیر خزانہ کو حکومت کی فراہم کردہ سبسڈیز کا تفصیلی جائزہ لینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ سبسڈیز کے جائزے کے لیے ایک خصوصی سیل قائم کیا جائے،سبسڈی کا جائزہ لے کر افادیت بڑھانے کے لیے جامع سفارشات پیش کریں۔وزیراعظم پاکستان نے احساس پروگرام سے ضرورت مندوں کو نقد رقوم کی فراہمی کو سراہتے ہوئے کہا کہ بجلی،گیس،یوٹیلٹی اسٹورز، دیگر سبسڈیز کے لیے ڈیٹا بیس سے استفادہ کیا جائے۔