کورونا کے خوف نے دنیا بھر میں کتنے لاکھ افراد کی سیگریٹ چھڑوا دی؟ حیران کن اعداد و شمار جاری

لندن(ویب ڈیسک)کورونا وائرس نے جہاں دنیا بھرمیں ایک کروڑ سے زائد لوگوں کو متاثرکیا ہے اور لاکھوں لوگوں کے انتقال کی وجہ بنا ہے وہیں اس کا ایک فائدہ بھی ہے کہ لاکھوں افراد نے تمباکو نوشی ترک کردی ہے۔بی بی سی کی ایک رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں سگریٹ نوشی اور صحت کے متعلق کام کرنے والے

ایک فلاحی ادارے کے سروے کے مطابق کورونا کی وبا کے آغاز سے اب تک دس لاکھ سے زائد افراد نے سگریٹ نوشی ترک کر دی ہے۔سروے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ تمباکو نوشی ترک کرنے والوں میں سے41 فیصد افراد نے پہلے چار ماہ میں ہی کورونا کے خوف سے سگریٹ پینا چھوڑدیا تھا۔15 اپریل سے 20 جون کے درمیان دس ہزار افراد پر کیے جانے والے سروے کے مطابق یہ بات سامنے آئی کہ ان میں سے آدھے افراد نے گذشتہ چار ماہ کے دوران سگریٹ نوشی کو ترک کیا اور ان کا کہنا تھا کہ ان کے اس فیصلے میں کورونا کی وبا نے اہم کردار ادا کیا ہے۔یونیورسٹی کالج لندن کی ایک ٹیم سنہ 2007 سے ہرماہ ایک ہزار افراد سے سگریٹ نوشی کے متعلق جانتی ہے۔ ان کے سروے کے مطابق سنہ 2020 میں 7.6 فیصد افراد نے ان کے سگریٹ نوشی ترک کرنے کے سروے میں حصہ لیا جو کہ اس سروے کے آغاز سے اب تک ایک دہائی کے دوران سب سے زیادہ تعداد تھی۔سنہ 2007 سے اب تک اوسطً 5.9 فیصد افراد ہر سال سگریٹ نوشی ترک کرتے ہیں۔ تاہم اس سال یہ تعداد 7.6 فیصد ہے۔دوسری جانب یونیورسٹی کالج لندن کا ایک اور سروے بھی سامنے آیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ 2007 کے بعد گزشتہ ماہ میں ایک سال میں سب سے زیادہ لوگوں نے سگریٹ نوشی ترک کی۔حکومت نے متنبہ کیا تھا کہ سگریٹ نوش افراد میں کورونا وائرس کا شکار ہونے کے بعد شدید علامات سامنے آ سکتی ہیں۔