عمران خان کو اپنی صفوں میں موجود دشمن مل گیا۔۔!! کابینہ میں وہ کون سے لوگ ہیں جو ہر اچھے کام کو اُلٹا کر رہے ہیں؟ اینکر پرسن عمران ریاض خان کا تہلکہ خیز انکشاف

اسلام آباد( نیوز ڈیسک) سینئر اینکر پرسن عمران ریاض خان کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان صاحب کی اپنی صفوں میں دشمن ہیں،حکومت جو بھی اچھا کام کرتی ہے الٹا وہ اسکے گلے پڑجاتا ہے۔ حکومت نے چینی بحران پر جے آئی ٹی بنائی، ایسا پاکستان کی تاریخ میں نہیں ہوا لیکن الٹا انہیں بدنامی ملی۔تفصیلات کے مطابق اپنے یوٹیوب چینل پر جاری ویڈیو میں عمران ریاض خان کا کہنا تھا کہ عمران خان کے کمیشن بناتے ہی چینی راتوں رات پاکستان کی مارکیٹوں سے غائب ہوگئی،

جو چینی ستر روپے فی کلو کے حساب سے ملنی چاہئے تھی وہ نہیں ملی،جب پٹرول سستا ہوا تو پمپوں سے پٹرول غائب، جب پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہوا تو پٹرول واپس آگیا، وزیر اعظم جانتے ہیں کہ اس کے پیچھے کس کا ہاتھ ہے، لیکن ابھی نام لینے کا وقت نہیں ہے۔جے آئی ٹی کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے عمران ریاض خان کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت کی جانب سے جیسے ہی جے آئی ٹی رپورٹ جاری کی گئی ویسے ہی قانون نافذ کرنے والے اداروں نے اقبالی بیان جاری کر دیا، قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے یہ اقبالی بیان اس لیے جاری کیا گیا ہے تاکہ حقائق عوام کے سامنے آسکیں، اب سوال یہ ہے کہ جو رپورٹ سندھ حکومت نے جاری کی ہے وہ اصلی ہے یا جعلی تو اسکا جواب ہے وہ روپورٹ جعلی ہے۔ نواز شریف اور سابق آرمی چیف راحل شریف اس بات کے مستحق ہیں کہ انہیں کریڈٹ دیا جائے کیونکہ انکے دور میں کراچی میں امن و امان قائم ہوگیا تھا، دونوں نے اپنا اپنا کردار ادا کیا لیکن جب جے آئی ٹی تشکیل دی گئی تو پیپلز پارٹی نے شور مچانا شروع کر دیا کہ اب انکا نام جرائم پیشہ عناصر کے ساتھ جوڑا جائے گا۔ پیپلزپارٹی کے جن لوگوں نے جرائم پیشہ عناصر سے خون کروائے ، بھتے منگوائے، چائنہ کٹنگ کروائی، زمینوں اور شوگر ملوں پر قبضے کروائے،ان سب کے نام جے آئی ٹی سے نکلواکر افسران سے دستخط کروائے گئے، افسران دستخط کرنے پر رضا مند نہیں تھے لیکن نواز شریف نے اداروں کو قائل کیا کہ اس میں سے سیاسی لوگوں کے نام نکال دیئے جائیں۔ عمران ریاض خان کا کہنا تھا کہ چوہدری نثار نے اس وقت اس چیز کی مخالفت کی تھی، لیکن جیسے ہی چوہدری نثار سائیڈ لائن ہوئے تو یہ کام آسان ہوگیا، یہی وجہ ہے کہ جو جے آئی ٹی اب سامنے آئی ہے وہ ہومیو پیتھک جے آئی ٹی ہے، جو لوگوں کی جانے لیتا رہا وہ بتا رہا ہے کہ اس نے لوگوں کو کیوں اور کس کہنے پر مارا لیکن مروانے والے کا نام نہیں لیا جا رہا۔