پاکستان میں کونسے انجیکشن سے کورونا کے 75 فیصد مریض ٹھیک ہو گئے ؟ خبر آتے ہی پوری دنیا کی نظریں پاکستان پر لگ گئیں

لاہور (ویب ڈیسک) جوڑوں کے درد میں استعمال ہونے والے انجیکشن ایکٹمرا کے کورونا کے مریضوں پر مثبت اثرات سامنے آگئے۔ایکٹمرا انجیکشن کا ٹرائل لاہور کے جنرل ہسپتال میں 54 مریضوں پر کیا گیا۔ ڈاکٹرز نے مریضوں کو ایکٹمرا کے 2، 2 انجیکشن لگائے جس کے بعد 75 فیصد مریض 10 روز کے اندر اندر ٹھیک ہوگئے۔اس تجربے

کے دوران 7 مریضوں کی اموات بھی ہوئی ہیں لیکن یہ وہ مریض تھے جو پہلے سے ہی گردوں اور شوگر کی بیماریوں میں مبتلا تھے۔ ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ صرف ایکٹمرا لگانے سے فائدہ نہیں ہوتا کیونکہ یہ گردوں کو نقصان پہنچاتا ہے اور دیگر انفیکشنز کا خطرہ بھی بڑھاتا ہے، اس کے ساتھ دیگر ادویات بھی دینی پڑتی ہیں۔خیال رہے کہ اس سے پہلے بھی ایکٹمرا انجیکشن کے کورونا کے مریضوں پر مثبت نتائج سامنے آچکے ہیں جس کی وجہ سے پاکستان میں یہ بلیک میں لاکھوں روپے میں فروخت ہورہا ہے۔ وزیر اعلیٰ پنجاب نے ایکٹمرا انجیکشن اور دیگر ضروری ادویات ذخیرہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا حکم دے دیا ہے۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق کورونا وائرس کے تدارک کے لیے دنیا بھر کے سائنسدان سخت جدوجہد کر رہے ہیں اور اب 32ممالک کے 239سائنسدانوں نے اس حوالے سے عالمی ادارہ صحت سے انتہائی اہم مطالبہ کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق ان سائنسدانوں نے اپنی تحقیق میں ثابت کیا ہے کہ کورونا وائرس عمارتوں کے اندرطویل وقت تک ہوا میں معلق رہ سکتا ہے اور وہاں آنے جانے والے لوگوں کو ہوا سے منتقل ہو سکتا ہے، چنانچہ سائنسدانوں نے عالمی ادارہ صحت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اعتراف کرے کہ کورونا وائرس ’ایئربارن‘ ہے۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”عالمی ادارہ صحت اس بات کا اعتراف کرتے ہوئے کورونا وائرس کو روکنے کے لیے جاری کردہ اپنی ہدایات اپ ڈیٹ کرے۔ ان ہدایات میں لوگوں کو تنبیہ کی جائے کہ وہ عمارات کے اندر بھی فیس ماسک پہن کر رکھیں اور اے سی یونٹس کے ساتھ فلٹر بھی لگائے جائیں تاکہ جہاں سنٹرلی ایئرکنڈیشن یونٹ ہو وہاں ایک سے دوسرے کمرے میں وائرس منتقل نہ ہو۔“واضح رہے کہ تاحال عالمی ادارہ صحت کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس لوگوں کے منہ سے نکلنے والے لعاب کے نظر نہ آنے والے قطروں سے دوسروں کو منتقل ہوتا ہے مگر یہ قطرے منہ سے نکل کر فوراً زمین پر گر جاتے ہیں اور ہوا میں معلق نہیں رہتے۔ عالمی ادارہ صحت کی حالیہ ہدایات کے مطابق اگر دو لوگ آپس میں مناسب فاصلہ رکھ کر بات کریں تو انہیں ایک دوسرے سے وائرس لاحق ہونے کا خطرہ نہ ہونے کے برابر ہوتا ہے تاہم سائنسدانوں کی اس عالمی ٹیم نے اس کے برعکس انکشاف کرتے ہوئے عالمی ادارہ صحت سے ہدایات اپ ڈیٹ کرنے کا مطالبہ کر دیا ہے۔

پاکستان میں کونسے انجیکشن سے کورونا کے 75 فیصد مریض ٹھیک ہو گئے ؟ خبر آتے ہی پوری دنیا کی نظریں پاکستان پر لگ گئیں” ایک تبصرہ

  1. This is all falsemyfather was in Adil Hospital for eight days, he had namonia. I deeply observe the Dr’s bahaviour there. They were very excited about the actemra inj. Just bcz of earn money. Almost all patients die there who had actemra theropy. At least 8 Deaths out of 9 I had seen my self. We did not go for actemra therapy despite of the fact that our patient report shows covid positive. He is alive and getting better day by day. Thanks God we r out from that graveyard.

تبصرے بند ہیں