خان صاحب !!!زیادہ لاڈ پیار انسان کو بگاڑ دیتا ہے ، عثمان بزدار کے عزیز کس طرح زمینوں پر قبضے کر کے پنجاب کو بدنام کر رہے ہیں ۔۔۔ عمران خان سے وزیراعلیٰ پنجاب کے لیے کسی اور کے انتخاب کا مطالبہ کر دیا گیا

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)عثمان بزدار نے کوئی اچھا کام نہیں کیا، وہ تو ساری زندگی ایک کریانے کی دکان نہیں چلا سکے، ان کے عزیز ، بھائی ، رشتے دار ، کزن زمینوں پر قبضے کر رہے ہیں، انہیں کوئی پروا نہیں ، آدھی رات کو فون کر کے ملزمان کو چھڑواتے ہیں ، اس

نے کیا فیصلے کرنے ہیں ۔ سینئرتجزیہ کار ہارون الرشید نے نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کے دوران کہا ہے کہ میرے پاس دو خبریں ہیں ، ایک یہ ہے کہ جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کیلئے ایڈیشنل چیف سیکرٹری اور ایڈیشنل آئی جی کا تقرر ہوگیا ہے ، دوسرے بات یہ ے کہ اس کا ایک زبردست نتیجہ نکلا ہے ، پس پردہ لابنگ ہوئی ہے ۔ طاہر بشیر چیمہ نے کہا ہے کہ عثمان بزدار سے کچھ ایم پی ایز ن لیگ اور پیپلز پارٹی کے ملے ہیں ، اس کے علاوہ بھی ایم این ایز ہمارے ساتھ رابطے میں ہیں ۔ چند دنوں میں اپوزیشن کی طبعیت صاف کر دینگے ، اگر وہ صوبہ بن جائے تو پنجاب میں حکومت حمزہ کو دینی پڑے گی ، ن لیگ کے جنوبی پنجاب کیلئے کچھ نہیں کیا ۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق محکمہ انسداد بدعنوانی پنجاب نے ایک ماہ کے دوران 4 ارب سے زائد رقم کی ریکوری کرلی جبکہ کنالوں سرکاری اراضی واگزار کروائی گئی ۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کی ہدایت پر اینٹی کرپشن پنجاب نے زبردست ایکشن لیتے ہوئے جون 2020 میں 4 ارب 41 کروڑ 95 لاکھ روپے کی ریکوری کرلی۔ ایک ماہ کے دوران 10 کروڑ 39 لاکھ روپے کی کیش ریکوری بھی کی گئی ۔ اس عرصے میں4 ہزار 856 کنال اور 16 مرلے سرکاری اراضی واگزار کروائی۔ واگزار کروائی گئی زمین کی مالیت 3 ارب 36 کروڑ 3 لاکھ 60ہزار روپے ہے۔1 ماہ میں 95 کروڑ 40 لاکھ روپے کی ان ڈائریکٹ ریکوری بھی کی گئی۔محکمہ اینٹی کرپشن کے مطابق ایک ماہ میں رپورٹ کرپشن ایپ پر 523 شکایات موصول ہوئیں، 315 شکایات کا فوری ازالہ کردیا گیا جبکہ دیگر پر ضروری کارروائی جاری ہے۔سابقہ شکایات سمیت 15 سو 74 شکایات کا 1 ماہ میں ازالہ کیا گیا، جون میں 324 انکوائریاں کی گئیں جبکہ 271 جاری انکوائریوں پر فیصلہ دیا گیا۔چھان بین کے بعد 97 کیسز رجسٹرڈ ہوئے جبکہ 99 جاری کیسز کا فیصلہ ہوا، 1 ماہ میں 59 چالان پیش کیے گئے۔ اینٹی کرپشن نے مجموعی طور پر 132 افراد کو گرفتار کیا، 1 ماہ میں ایک عدالتی مفرور اور 8 اشتہاریوں کو گرفتار کیا گیا۔